Monday, August 29, 2011

Ghazal

وہ شکست پائی ہے اب کے رزم گاہ میں
نعشے ہیں اِدھر اُدھر لشکرِ تباہ میں
دامنِ کنیز ہے جب سے دستِ شاہ میں
سلطنت اُتر گئی پستیوں کے چاہ میں
ایک راز اب تلک منکشف نہیں ہوا
روشنی ہے کیوں نہاں پردہٌ سیاہ میں
اپنے ہاتھ سے مجھے تیر توڑنے پڑے
آ گیا مرا عدو جب مری پناہ میں
عمر بھر ثواب کی حرص میں پڑے رہے
اور موت بھی ملی حالتِ گناہ میں
میں ہجومِ خلق میں ڈھونڈتا ہوں بندگی
ہر کوئی کھڑا ملا خواہشوں کی راہ میں
کاشف بٹ